Aaj News

سندھ میں سیلاب: صوبائی اور وفاقی حکومتوں کے درمیان اعلیٰ اختیاراتی اجلاس

اجلاس میں امدادی سامان کی خریداری اور ان کی تقسیم کے لیے وفاقی حکومت کے ساتھ ہم آہنگی، تعاون اور مل کر کام کرنے سمیت کئی اہم فیصلے کئے گئے ہیں۔
شائع 07 ستمبر 2022 08:16pm
<p>اے ایف پی</p>

اے ایف پی

وزیراعلیٰ ہاؤس سندھ میں صوبائی اور وفاقی حکومتوں کے درمیان اعلیٰ اختیاراتی اجلاس ہوا جس میں امدادی سامان کی خریداری اور ان کی تقسیم کے لیے وفاقی حکومت کے ساتھ ہم آہنگی، تعاون اور مل کر کام کرنے اور سیلاب سے تباہ ہونے والی اہم نکاسی آب کی شریانوں کو بحال کرنے کے لیے ایک ٹاسک فورس تشکیل دینے کا متفقہ فیصلہ کیا گیا۔

اجلاس میں چیئرمین پیپلز پارٹی و وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری، وزیر اعلیٰ سید مراد علی شاہ، وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال، صوبائی وزیر مکیش چاولہ، مشیران مرتضیٰ وہاب، رسول بخش چانڈیو، چیف سیکرٹری سہیل راجپوت، چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ نے شرکت کی۔

اختر نواز، کوآرڈینیٹر نیشنل فلڈ ریسپانس سنٹر میجر جنرل ظفر، کورفائیو کے بریگیڈیئر زیل حسنین، انجینئرنگ کور کے بریگیڈیئر نیئر اور متعلقہ صوبائی سیکرٹریز ب ھی اجلاس میں شامل تھے۔

اجلاس کے آغاز میں چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف سندھ کے سیلاب سے تباہ شدہ علاقوں کا تین بار دورہ کر چکے ہیں اور عوام کو 10 لاکھ خیموں، 30 لاکھ مچھر دانیوں اور راشن بیگز کی ضروریات جلد فراہم کی جائیں گی۔

ایک اور مسئلہ جو انہوں نے اٹھایا وہ نیشنل اور انڈس ہائی وے جیسی اہم شریانوں کی مرمت کا تھا تاکہ گاڑیوں کے بہاؤ کو یقینی بنایا جا سکے۔

انہوں نے این ڈی ایم اے سے امدادی سامان میں چارہ بھی شامل کرنے کا کہا تاکہ متاثرہ لوگوں کے مویشیوں کو چارہ فراہم کیا جا سکے۔

امدادی سامان

وزیراعلیٰ سندھ نے اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ 155059 خیمے بشمول این ڈی ایم اے کی جانب سے دیے گئے 10853، 900 یو این ایچ سی آر، 100 ڈولمین گروپ، 250 اے جے کے اور 500 محکمہ خوراک نے اضلاع میں بھیجے اور تقسیم کیے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کی حکومت نے 460,500 کا آرڈر دیا ہے جس میں سے 61,465 موصول ہو چکے ہیں اور 399,035 پائپ لائن میں ہیں۔

ترپال کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ان کی حکومت کے پاس 165,187 ترپال دستیاب ہیں جن میں سے 8497این ڈی ایم اے، 2500یو این ایچ سی آر اور 100 محکمہ خوراک نے فراہم کیے ہیں جنہیں تقسیم کر دیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کی حکومت نے 335,000 ترپالوں کا آرڈر دیا ہے، ان میں سے صرف 85,190 موصول ہوئے ہیں جبکہ 249,810 کی فراہمی ابھی باقی ہے۔

مراد علی شاہ نے کہا کہ 1.3 ملین مچھر دانیاں تقسیم کی گئی ہیں، جن میں سے 9730 این ڈی ایم اے، 6 لاکھ این آئی ایچ اور 6 لاکھ دوسروں نے فراہم کی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 435,000 مچھر دانی کے پروکیورمنٹ آرڈر کے مقابلے میں 36920 ڈلیور کر دیے گئے ہیں اور 398,080 پائپ لائن میں ہیں۔

وزیراعلیٰ نے راشن کے تھیلوں کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ اب تک 152,745 تھیلے جن میں این ڈی ایم اے کے 7500، یو ایس سی کے 57225 اور 15000 متفرق شامل ہیں۔

“ہم نے راشن کے 805,000 تھیلوں کا آرڈر دیا ہے اور اب تک 72,225 تھیلے موصول ہو چکے ہیں جبکہ 737,775 پائپ لائن میں ہیں۔”

وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم اے امدادی سامان کی خریداری کا عمل جاری رکھے ہوئے ہے، اور وہ صوبائی حکومت کو اس وقت فراہم کیا جائے گا۔

چیئرمین این ڈی ایم اے نے امدادی سامان کا ڈیٹا شیئر کیا جو وہ خرید رہے تھے۔

کور فائیو

کور فائیو کے بریگیڈیئر نے اجلاس کو بتایا کہ انہوں نے بارش سے متاثرہ لوگوں کی مدد کے لیے فوج کے 3641 اہلکار تعینات کیے ہیں۔ کورفائیو نے قمبر شہداد کوٹ ضلع کے سیلاب زدہ علاقوں سے لوگوں کو بچانے کے لیے فاول ہیلی کاپٹر کا استعمال کیا۔ پاک فوج نے 64 ریلیف کیمپ، 9 میڈیکل کیمپ اور 147 کشتیاں قائم کر رکھی ہیں اور متاثرہ افراد میں امدادی سامان تقسیم کر رہے ہیں۔

سیلاب کی صورتحال

انجینئرنگ کور کے بریگیڈیئر نیئر نے اجلاس کو بتایا کہ 15 ستمبر کے بعد بارش متوقع ہے اور ایل بی او ڈی کو متاثر کر سکتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت گڈو اور سکھر بیراج بالترتیب 210860 کے 302476 نچلے درجے کے سیلاب میں ہیں اور کوٹری بیراج کو اوپر کی طرف 604127 کیوسک اور ڈاون اسٹریم میں 583882 کیوسک کے اونچے سیلاب کا سامنا ہے۔

رپورٹ کے مطابق دریائے سندھ کے مغرب میں قمبر شہدادکوٹ سے کے این شاہ تک کا علاقہ زیر آب ہے۔ ایک سیلابی ریلا شمال سے جنوب کی طرف بہہ رہا ہے۔ آر بی او ڈی اور انڈس لنک کے کنارے دادو اور سہون کی حفاظت کر رہے ہیں۔

منچھر جھیل اور آر بی او ڈی میں ٹوٹ پھوٹ سے اگلے تین سے چار دنوں میں ایک اور جھیل بن جائے گی۔ اگلے چھ دنوں میں صوبے کے تمام بیراج نچلے درجے کے سیلابی ریلے اور معمول کے بہاؤ میں تبدیل ہو جائیں گے۔ منچھر کی سطح 122.3 آر ایل پر ہے۔

اس پر وزیراعلیٰ نے کہا کہ دادو اور سہون کو بچانے کے لیے انڈس لنک/آر بی او ڈی کے تحفظ کے لیے کوششیں کی جا رہی ہیں۔

اہم فیصلے

میٹنگ میں سیاسی قیادت نے دادو اور سہون کو بچانے کے لیے آر بی او ڈی اور انڈس لنک بند کو مضبوط کرنے کا فیصلہ کیا۔

دادو مورو پل پر سڑک اور لوڈ مینجمنٹ کا کام کیا جائے گا۔

پنگریو ٹاؤن کے اطراف نہری بندوں اور ایل بی او ڈی کو مضبوط کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔

وزیراعلیٰ نے آبپاشی کے ماہرین اور انجینئرنگ کور کی مشاورت سے ڈھورو پران کے پانی کو ریگولیٹ کرنے اور اس کے پانی کو اسپائنل ڈرین – ایل بی او ڈی میں خارج کرنے کا فیصلہ کیا۔

نکاسی آب

آرمی انجینئرنگ کور نے اجلاس کو بتایا کہ کھیر میں پانی کی نکاسی کا کام سول انتظامیہ کے تعاون سے شروع کیا جائے گا۔

اجلاس نے ضلعی انتظامیہ، آبپاشی، زراعت، مقامی حکومت اور پبلک ہیلتھ انجینئرنگ کے محکموں کو ہدایت کی کہ وہ قصبوں، شہروں اور زرعی زمینوں سے بارش کے پانی کو ٹھکانے لگانے کے لیے ضروری انتظامات کریں تاکہ لوگ اپنے گھروں کو لوٹنا شروع کر سکیں۔

وزیراعلیٰ نے ربیع کی دیر سے فصلوں کے لیے گندم اگانے کے لیے زمینیں تیار کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔

اجلاس کے اختتام پر یہ فیصلہ کیا گیا کہ سیلاب سے متاثرہ امدادی سامان کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ایک صوبائی ٹاسک فورس کو وفاقی حکومت کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے مطلع کیا جائے گا۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ ٹاسک فورس کو جمعرات تک مطلع کر دیا جائے گا۔

Bilawal Bhutto Zardari

CM house

sindh chief minister

Sindh floods

Comments are closed on this story.

مقبول ترین