Aaj.tv Logo

95 فیصد سائبر سیکیورٹی کی خلاف ورزیاں انسانی غلطیاں ہیں، ڈی جی ایف آئی اے

23 مارچ 2022
ڈائریکٹر جنرل فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) ثناء اللہ عباسی ــــــ فائل فوٹو
ڈائریکٹر جنرل فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) ثناء اللہ عباسی ــــــ فائل فوٹو

دبئی: ڈائریکٹر جنرل فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) ثناء اللہ عباسی نے کہا ہے کہ سائبر سیکیورٹی میں انسانی عنصر ایک اہم کمزور نقطہ ہے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق دبئی میں جی آئی ایس ای سی گلوبل 2022 کے زیر اہتمام نمائش اور کانفرنس میں حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ سائبر جرائم میں انسانی غلطیوں کو اکثر نظر انداز کیا جاتا ہے اور اس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر سائبر خلاف ورزیاں ہوتی ہیں۔

آئی بی ایم کی طرف سے کی گئی ایک حالیہ تحقیق کا حوالہ دیتے ہوئے عباسی نے کہا کہ سائبر سیکیورٹی کی 95 فیصد خلاف ورزیاں انسانی غلطیوں کی وجہ سے ہوئیں۔

انہوں نے اپنے مطالعے اور اپنے دہائیوں کے طویل تجربے کی بنیاد پر ثناء اللہ عباسی نے مشورہ دیا کہ اگرانسانی غلطی کو ختم کر دیا جاتا یا کسی حد تک اس پر مشتمل ہوتا ہے، تو 20 میں سے 19 سائبر خلاف ورزیاں نہیں ہو سکتی تھیں۔

سائبر حملوں کا مقابلہ کرنے اور تنظیموں کو سائبر دراندازی سے بچانے کی کوشش میں ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ تنظیموں کو انسانی غلطی کے عنصر سے نمٹنے کے لیے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک سائبر افرادی قوت تیار کرنی چاہیے، جن میں ماہرین سائبر سیکیورٹی شامل ہوں، جو چیلنج کا مقابلہ کرنے کے قابل ہو۔

ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے نے حیران کن اعدادوشمار شیئر کیے جو دنیا بھر میں سائبر سیکیورٹی کی خلاف ورزیوں کو ظاہر کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی سطح پر تنظیموں پر سائبر جرائم کی تخمینہ لاگت 400 بلین ڈالر تک پہنچ گئی ہے تاہم 95 فیصد ڈیٹا کی خلاف ورزیوں کی وجہ انسانی غفلت تھی۔

کانفرنس کے بعد سوال و جواب کا سیشن ہوا جس میں سامعین سے GISEC گلوبل 2022 میں مختلف سوالات پوچھے گئے۔