Aaj News

مقبوضہ کشمیر میں 4 ملکی سرمایہ کاری سمٹ جاری

مودی حکومت کا دعویٰ ہے کہ اگر ترقی اور خوشحالی سے بے روزگاری ختم ہوتی ہے تو پاکستان یہاں کے نوجوانوں کو بھارت مخالف سرگرمیوں کے لیے اکسانے میں ناکام رہے گا۔
شائع 23 مارچ 2022 10:53am
تصویر: رائٹرز/فائل
تصویر: رائٹرز/فائل

سعودی عرب، متحدہ عرب امارات (یو اے ای) اور ہانگ کانگ کے وفود نے منگل کو ہندوستان کے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر میں سرمایہ کاری کانفرنس میں شرکت کی اور اس مقصد کے لیے 2000 ایکڑ اراضی مختص کی گئی ہے۔

بی بی سی اردو کی رپورٹ کے مطابق مختلف کمپنیوں کے 30 سے ​​زائد ارکان اس وقت ہمالیہ کے متنازع علاقے میں موجود ہیں تاکہ اس موٹ میں سرمایہ کاری کے مواقع کا جائزہ لیا جا سکے جو مزید 3 دن تک جاری رہے گا۔

مقبوضہ جموں و کشمیر کے پرنسپل سکریٹری کے مطابق انتظامیہ مقامی لوگوں کی زمین کو الاٹ نہیں کر رہی ہے بلکہ وہ جو ریاست کی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مقامی لوگ بھی زمینی قوانین میں مناسب تبدیلی کے بعد اپنی زمین کے بارے میں فیصلے لے سکتے ہیں۔

مذکورہ ممالک کے وفود ایک ایسے وقت میں سرمایہ کاری کے اختیارات کا جائزہ لے رہے ہیں جبکہ او آئی سی کے وزرائے خارجہ مقبوضہ جموں و کشمیر اور مسلم دنیا کو درپیش دیگر مسائل پر بلاک کے ایک اہم اجلاس کے لیے اسلام آباد میں ہیں۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ بھارتی حکومت مقبوضہ علاقے میں سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے گزشتہ 2 برسوں سے کوششیں کر رہی ہے لیکن یہ کوششیں صرف ایشیائی ممالک تک محدود ہیں اور امریکا، برطانیہ یا دیگر مغربی ممالک نے کوئی خاطر خواہ مظاہرہ نہیں کیا۔

مزید براں نریندر مودی کی زیرقیادت حکومت یہ موقف رکھتی ہے کہ خطے میں خوشحالی کا تصور مقبوضہ جموں و کشمیر میں بے روزگاری کا خاتمہ کرے گا اور نوجوان پھر 'ریاست مخالف حکومت کا حصہ' بننے سے انکار کر دیں گے۔

اس سے قبل 5 اگست 2019 کو ہندوستان نے ایک ایسا اعلان کیا جس نے پوری دنیا میں صدمے کی لہریں بھیج دیں۔

تاہم ہندو قوم پرست حکومت نے مقبوضہ کشمیر سے اس کی نیم خودمختار حیثیت کو چھین لیا جس کی ضمانت بھارتی آئین کے آرٹیکل 370 کے تحت دی گئی تھی، جو خطے کی آبادی کو تبدیل کرنے کے منصوبے کے تحت ہے۔

UAE

Narendra Modi

BJP

pakisan

Comments are closed on this story.