Aaj News

دفتر خارجہ کا سفارت کاروں کو سیاستدانوں سے ملاقات کے دوران سفارتی اصولوں پر عمل کرنے کی ہدایت

ترجمان کا یہ بیان بعض مغربی ممالک کے سفارت کاروں کی اپوزیشن رہنماؤں کے ساتھ حالیہ ملاقاتوں کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں آیا ہے۔
اپ ڈیٹ 19 مارچ 2022 01:35pm
فائل فوٹو
فائل فوٹو

دفتر خارجہ نے اسلام آباد میں تعینات سفارت کاروں کو یاد دلایا کہ انہیں ملک کے سیاست دانوں سے ملاقاتوں کے دوران بعض سفارتی اصولوں پر عمل کرنے کی ضرورت ہے۔

ہفتہ وار میڈیا بریفنگ کے دوران دفتر خارجہ کے ترجمان عاصم افتخار نے کہا کہ ملک کے سیاستدانوں سے ملاقاتوں سے قبل کچھ سفارتی اصول ہیں جنہیں پورا کرنا غیر ملکی سفارت کاروں کو ضروری ہے۔

ترجمان کا یہ بیان وزیر اعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے تناظر میں جاری سیاسی تعطل کے درمیان اپوزیشن جماعتوں کی قیادت کے ساتھ بعض مغربی ممالک کے سفارت کاروں کی حالیہ ملاقاتوں کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں سامنے آیا ہے۔

ترجمان نے مزید تفصیلات بتائے بغیر کہا کہ ہاں، سفارتی اصول ہیں جو ہم غیر ملکی سفارت کاروں کو بتاتے رہے ہیں جبکہ انہوں نے سیاسی رہنماؤں کے مختلف بیانات پر تبصرہ کرنے سے بھی انکار کر دیا۔

اس پر تبصرہ کرتے ہوئے کہ انہوں نے کہا کہ 9 مارچ 2022 کو میاں چنوں کے قریب زمین پر گرنے والے بھارتی سپرسونک میزائل کے ذریعے پاکستان کی فضائی حدود کی بلا اشتعال اور واضح خلاف ورزی کے سنگین واقعے نے شہریوں کی املاک کو نقصان پہنچایا.

انہوں نے کہا کہ میزائل کی پرواز کا راستہ بھی بہت سے لوگوں کو خطرے میں ڈال رہا ہے، مزید کہا کہ ہندوستانی فریق نے ابھی تک پاکستان کی طرف سے پوچھے گئے سوالات کا جواب نہیں دیا۔

تاہم اس واقعے کی سنگین نوعیت سیکیورٹی پروٹوکول اور جوہری ماحول میں میزائلوں کے حادثاتی یا غیر مجاز لانچ کے خلاف تکنیکی تحفظات کے حوالے سے کئی بنیادی سوالات کو جنم دیتی ہے۔

اس طرح کے سنگین معاملے کو ہندوستانی حکام کی جانب سے پیش کردہ سادہ وضاحتوں کے ساتھ حل نہیں کیا جا سکتا۔

foreign office

پاکستان

Foreign Office Spokesperson

Comments are closed on this story.