Aaj TV News

BR100 4,597 Increased By ▲ 11 (0.24%)
BR30 17,781 Increased By ▲ 212 (1.21%)
KSE100 45,018 Increased By ▲ 192 (0.43%)
KSE30 17,748 Increased By ▲ 82 (0.46%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,360,019 6,540
DEATHS 29,077 12
Sindh 520,415 Cases
Punjab 460,335 Cases
Balochistan 33,855 Cases
Islamabad 115,939 Cases
KP 183,865 Cases

اسلام آباد:سپریم کورٹ آف پاکستان نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو نیب کے سامنے سرینڈر کرنے کا حکم دے دیا۔

جسٹس عمر عطاء بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کی ضمانت سے متعلق کیس کی سماعت کی۔

عدالت نے آغا سراج درانی کے وکیل کی ٹرائل کورٹ کے سامنے سرینڈر کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اسپیکر سندھ اسمبلی پہلےسندھ ہائیکورٹ کے حکم پر عمل کریں۔

جسٹس عمرعطا ءبندیال نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ٹرائل کورٹ کے سامنے سرینڈر کرنے کا حکم نہیں دے سکتے، ہم نے قانون کے مطابق چلنا ہے۔

جسٹس سجاد علی شاہ نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ آغا سراج درانی پہلےنیب اتھارٹی کو سرینڈرکریں ، سرینڈر کریں گے تو آپ کی درخواست ضمانت ٹیک کرلیں گے۔

اس موقع پر آغا سراج درانی کے وکیل نے جواب دیا کہ عدالت کے سامنے مؤکل نے سرینڈر کر دیا ہے ،کم از کم ٹرائل کورٹ کے سامنے سرینڈر کرنے کی اجازت دے دیں،جس پر جسٹس سجاد علی شاہ نے ریمارکس دیئے کہ اس طرح کے سرینڈر کو عدالت نہیں مانتی ۔

جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ ہائیکورٹ سے ضمانت خارج ہونے کے ضمانت بعد از گرفتاری کیسے کی گئی ،ملزم نے نیب کے سامنے سرینڈر نہیں کیا۔

جسٹس سجاد علی شاہ نے آعا سراج درانی کے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ جب ہائیکورٹ نے ضمانت منسوخ کی تو آپ کو جیل میں ہونا چاہیئے تھا، آغا سراج درانی نے گرفتاری کیوں نہیں دی؟ ہم آپ کو خصوصی رعایت کیوں دیں؟ ۔

سپریم کورٹ کی جانب سے حکم جاری کیا گیا کہ اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی نیب کے سامنے سرینڈر ہوں۔

بعد ازاں عدالت نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو احاطہ عدالت سے گرفتار نہ کرنے کی استدعا مسترد کردی اور کیس کی سماعت آئندہ ہفتے تک ملتوی کردی۔

نیب کا اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو اسلام آباد سے ہی گرفتار کرنے کا فیصلہ

ادھر قومی احتساب بیورو (نیب) نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو اسلام آباد سے ہی گرفتار کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

ذرائع کے مطابق نیب نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کو اسلام آباد سے ہی گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا ہے،جس کی تیاریاں مکمل کرلیں۔

ذرائع کے مطابق،آغا سراج درانی کو نیب راولپنڈی کے حوالات میں رکھا جائے گا، کل راہداری ریمانڈ لینے کے بعد آغا سراج درانی کو سندھ منتقل کیا جائے گا جبکہ آج آغا سراج درانی کا میڈیکل چیک اپ کرایا جائے گا۔

عدالت سے باہر نکلیں گے تو پتہ چلے گا کہاں سے گرفتار ہونا ہے،آغا سراج درانی

دوسری جانب میڈیا سے بات کرتے ہوئے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کا کہنا تھا کہ ہم قانون کی پیروی کرتے ہیں،ہماری قیادت نے ہمیں قانون کی پاسداری سکھائی ہے، ہائیوہرٹ سے سپریم کورٹ ریلیف لینے کیلئےآئے ہیں اور عدالتی حکم ہمیشہ مانتے ائے ہیں، عدالتوں میں پہلی بار نہیں آئے۔

صحافی نے سوال کیا کہ آپ گرفتاری یہاں دیں گے یا سندھ جا کر دیں گے، جس پر آغا سراج درانی نے جواب دیا کہ عدالت سے باہر نکلیں گے تو پتہ چلے گا کہاں سے گرفتار ہونا ہے۔

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اسمبلی کا اجلاس نہیں بلا سکتا،اسمبلی اپنے طریقہ کار سے چلتی ہے۔