Aaj TV News

BR100 4,570 Decreased By ▼ -108 (-2.31%)
BR30 17,697 Decreased By ▼ -927 (-4.98%)
KSE100 44,833 Decreased By ▼ -674 (-1.48%)
KSE30 17,652 Decreased By ▼ -274 (-1.53%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,338,993 5,472
DEATHS 29,037 8
Sindh 509,308 Cases
Punjab 455,499 Cases
Balochistan 33,744 Cases
Islamabad 112,557 Cases
KP 182,619 Cases

امریکا نے کابل پر طالبان کے کنٹرول کے بعد وہاں موجود امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کے زیر استعمال آخری ’’ایگل بیس‘‘ پر موجود ساز وسامان کو تباہ کر دیا ہے۔

امریکی حکام نے کثیر الاشاعت اخبار نیویارک ٹائمز کو بتایا کہ کابل ہوائی اڈے پر داعش کی جانب سے بم دھماکے کے بعد ایک دوسرا دھماکہ سنائی دیا گیا۔

طالبان ترجمان کے ذبیح اللہ مجاہد کے مطابق کہ دوسرا دھماکہ امریکیوں کی جانب سے ایگل بیس پر موجود ساز وسامان کو تباہ کرنے کے لیے کیا گیا۔

امریکی حکام کی جانب سے نیویارک ٹائمز کو دی جانے والی معلومات میں بتایا گیا ہے کہ کابل کی ایگل بیس کو تباہ کرنے کی غرض سے کیا جانا والا دھماکہ کنٹرول نوعیت کا تھا۔ اس کا مقصد سی آئی اے کی بیس پر موجود خفیہ معلومات اور حساس آلات کو طالبان کے ہاتھ لگنے سے بچانا تھا۔ ایگل بیس کو افغانستان کی بیس سالہ جنگ کے دوران کاؤنٹر ٹیررازم تربیتی اڈے کے طور پر استعمال کیا جاتا رہا ہے۔

سی آئی اے کے ساتھ کام کرنے والے ایک کنڑیکٹر نے نیو یارک ٹائمز کو بتایا کہ بیس کو تباہ کرنا آسان کام نہیں تھا۔ انہوں نے بتایا کہ بیس پر موجود دستاویزات جلانا، ہارڈ ڈرائیوز کو کچلنا اور حساس آلات کو ناکارہ بنانا اس لیے ضروری تھا کہ یہ چیزیں طالبان کے ہاتھ نہ لگ جائیں۔ ایگل بیس سفارت خانے کے ماڈل پر کام نہیں کرتی، اس لیے وہاں ایسی چیزوں کو تباہ کرنا آسان امر نہیں تھا۔