Aaj TV News

BR100 4,687 Decreased By ▼ -28 (-0.59%)
BR30 18,641 Decreased By ▼ -617 (-3.2%)
KSE100 45,612 Decreased By ▼ -151 (-0.33%)
KSE30 17,942 Decreased By ▼ -56 (-0.31%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,328,487 4,340
DEATHS 29,019 7
Sindh 502,500 Cases
Punjab 453,392 Cases
Balochistan 33,705 Cases
Islamabad 111,376 Cases
KP 182,311 Cases

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس میں پاکستان کو مدعو نہ کرنے پر پاکستان کے مستقل مندوب نے اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کے صدر کو خط لکھ دیا۔

خط میں کہا گیا ہے کہ پاکستان دو عشروں سے افغانستان کی صورتحال سے متاثر ہے، اجلاس میں بلانا چائیے تھا، این جی او کو اجلاس میں بلایا جاسکتا ہے تو پاکستان کو کیوں نہیں؟

اقوم متحدہ میں پاکستان کے مستقل مندوب منیر اکرم نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ سلامتی کونسل کے اجلاس میں پاکستان کو مدعو نہ کرنا سلامتی کونسل کے قوانین کی خلاف ورزی ہے۔ پاکستان نے سلامتی کونسل کے اجلاس میں شرکت کی درخواست کی تھی۔

نیویارک میں پریس بریفنگ کے دوران انہوں نے کہا کہ بھارت کی سربراہی میں ہونے والے سلامتی کونسل کے اجلاس میں شفافیت کی امید نہیں تھی۔ اجلاس میں پاکستان کے برعکس افغان مندوب کو خطاب کی اجازت دی گئی۔

انہوں نے کہا کہ افغان مسئلے کا فوجی حل نہیں، پاکستان نے افغان مسئلے کے سیاسی حل کی ہرممکن کوشش کی۔ پاکستان کو افغانستان کی تیزی سے بدلتی صورت حال پر تشویش ہے۔ پاکستان نے طالبان کو مذاکرات کی میز پر لانے کے لیے کردار ادا کیا۔ تاہم بہت سےمسلح گروہ افغانستان میں امن نہیں دیکھنا چاہتے۔

منیر اکرم نے کہا ہےکہ پاکستان اپنی سرزمین کو افغانستان کے خلاف استعمال نہیں ہونے دے گا، ہم افغانستان سے بھی ایسے رویے کی امید رکھتے ہیں۔ پاکستان 11 اگست کو دوحہ میں ہونے والے سہ ملکی اجلاس کا منتظر ہے۔

دوسری جانب افغانستان کی صورتحال پر سلامتی کونسل کے ہنگامی اجلاس میں امریکا نے انٹر افغان ڈائیلاگ کے ذریعے افغانستان کے مسئلے کے حل کی تلاش پر زور دیا۔ برطانیہ نے کہا کہ طالبان نے اگر جنگ کے ذریعے حکومت قائم کی تو تسلیم نہیں کریں گے۔

چینی مبصر نے کہا ہے کہ امریکا اور نیٹو ہاتھ جھاڑ کر مسائل پیچھے نہ چھوڑیں۔ افغان مشن کے سربراہ کا کہنا تھا کہ افغانستان کی صورتحال شام جیسی ہے۔ افغان جنگ زیادہ تباہ کن اور خطرناک مرحلے میں داخل ہو چکی ہے۔ جو پڑوسی ملکوں کو بھی متاثر کرسکتی ہے۔ طالبان کے مذاکراتی وفد کے سفری اجازت ناموں کو مشروط کرنا ہوگا۔